URDU, Anjuman Taraqqi-e-Urdu - Karachi

اردو

Anjuman Taraqqi-e-Urdu Pakistan
ISSN (print): 2519-6332
ISSN (online): 2708-1915

Introduction

URDU is published by Anjuman Taraqqi-e-Urdu Pakistan. Anjuman Taraqqi-e-Urdu formed in 1903. URDU was launched as a quarterly research journal by Baba-e-Urdu Moulvi Abdul Haq in 1921. Even after the emergence of Pakistan, URDU issued as a quarterly in 1950. But due to unforeseen circumstances it is sometimes published once a year and sometimes once in two years. Thereafter, in 2016, it was attempted to publish it regularly. The Higher Education Commission Pakistan, Islamabad (HEC) has included URDU in Y category in its list of approved journals. Its index is being prepared by Centre for Indexing, Department of Urdu, International Islamic University, Islamabad and an international indexing agency PKP Index. Besides Moulvi Abdul Haq, prominent Urdu scholars and researchers like Pir Hussamuddin Rashidi, Mushfiq Khwaja, Dr. Jamil Jalibi, Dr. Aslam Farrukhi and Dr. Rauf Parekh were among the editors. Nowadays, Dr. Zulqarnain Ahmed Shadab Ehsani is its editor.

’’اردو‘‘ انجمن ترقیٔ اردو پاکستان کے زیرِ اہتمام شائع ہوتا ہے۔ انجمن ترقیٔ اردو کا قیام ۱۹۰۳ء میں، علی گڑھ میں عمل میں آیا۔ ’’اردو‘‘ باباے اردو مولوی عبدالحق نے ۱۹۲۱ء میں بطور سہ ماہی تحقیقی مجلّہ جاری کیا۔ قیامِ پاکستان کے بعد بھی ’’اردو‘‘ کراچی سے ۱۹۵۰ء میں بطور سہ ماہی جاری ہوا لیکن نامساعد حالات کے باعث یہ بعض اوقات سال میں ایک بار اور کبھی دو سال میں ایک بار بھی شائع ہوا۔  اس کے بعد ۲۰۱۶ء میں اس کی اشاعت میں باقاعدگی لانے کی کوشش کی گئی۔’’اردو‘‘ کو ۲۰۱۸ء میں ہائر ایجوکیشن کمیشن، اسلام آباد نے منظور کرکے اپنے تحقیقی جرائد کی فہرست کے ’زیڈ‘ (Z) درجے میں شامل کیا۔ اب یہ بطور شش ماہی شائع ہوتا ہے اور جلد متوقع ہے کہ اسے’وائی‘ (Y) درجے میں ترقی دے دی جائے۔اس کے مشمولات کا اشاریہ (Index) قومی اشاریہ ساز ادارے، مرکزِ اشاریہ سازی، شعبۂ اردو، بین الاقوامی اسلامی یونی ورسٹی (اسلام آباد) کے تحت تیار کیا جاتا ہے۔ مولوی عبدالحق کے علاوہ اردو کے معروف ادبا و محققین مثلاً پیر حسام الدین راشدی، مشفق خواجہ، ڈاکٹر جمیل جالبی،  ڈاکٹر اسلم فرّخی اور ڈاکٹر رؤف پاریکھ وغیرہ اس کے مدیر رہے۔  آج کل ڈاکٹر ذوالقرنین احمد شاداب احسانی اس کے مدیر ہیں۔